لاڑکانہ(رپورٹ نادر مائری)

پاکستان تحریک انصاف سندھ کے سابق صوبائی صدر امیر بخش بھٹو نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ 6 جون 2021ء پر پُرامن مظاہرے پر سندھ حکومت کی ظالمانہ پُرتشدد کاروائی کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔محرومیت کا شکار بنے ہوئے سندھیوں کی جانب سے آواز بلند کرنے پر اُن پر شیل، آنسو گئس اور لاٹھی چارج سے یلغار کی گئی اور بے گناہ کارکنان کو گرفتار کیا گیا، یہ انتظامیہ اور بحریا ٹاؤن کی ملی بھگت کے ذریعے تخریبکاری اور دہشتگردی کا ڈرامہ رچایا گیا۔ امیر بخش بھٹو نے مزید کہا کہ سیاسی کارکن اور اُن کی کال پر آئی ہوئی سندھی عوام دہشتگرد اور تخریبکار نہیں ہو سکتے اور اُن کی گرفتاریاں سندھی عوام سے بڑا ظلم ہے۔ امیر بخش بھٹو نے مزید کہا کہ نام نہاد منتخب سندھ حکومت مظلوم سندھی عوام کا ساتھ دینے کے بجائے مال کی لالچ میں بڑے صنعتکاروں اور مالداروں کو تحفظ دے رہی ہے۔ انہوں نے 13 برسوں سے سندھ دھرتی کو نچوڑ کر اندازے سے زیادہ حرام کا مال کمایا ہے، مگر پھر بھی ان کے پیٹ نہیں بھرتے۔ سندھ کی عوام سندھ حکومت کے عوام دشمن رویے کا نوٹس لے اور اُن سے حساب کتاب بھی لے۔