سکھر(رپورٹ۔امداد علی گل کلوڑ )

تفصیلات کے مطابق سندھ کے تیسرے بڑے شہر سکھر کے علاقے نیو بس ٹرمینل سبزی منڈی کے قریب واقع قدیمی و تاریخی قربستان لعل مشائخ پر بلڈر مافیا نے قبریں مسمار کرکے قبرستان پر قبضہ کرکے ہاؤسنگ اسکیم شروع کرنے کے خلاف گذشتہ روز تدفین کیلئے آنے والے کھوسہ برادری کے سیکڑوں افراد نے قبرستان پر قبضے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا اور سکھر انتظامیہ سمیت بلڈر کے خلاف نعرے بازی کی مظاہرے میں شامل عبدالقیوم کھوسو،شمس الدین کھوسہ،عرفان کھوسہ و دیگر کا کہنا تھا کہ لعل مشائخ المعروف سید کمال شاہ قبرستان پر قبضہ مافیا کا راج ہے ،قبریں مسمار کرکے پلاٹنگ اور ہاؤسنگ اسکیم چلائی جارہی ہے جو لمحہ فکریہ بنتا جارہا ہے،قبرستان میں سدھ کے سابق وزیر اعلی سندھ قائم علی شاہ کے دادا کی بھی ہے ، تاریخی قبرستان پر مقامی افراد سمیت بلڈر ہاؤسنگ اسکیم چلا رہے ہیں تو قریبی سبزی منڈی کے تاجروں نے بھی اس کی آڑ لیکر قبضےکرنا شروع کردیئے ہیں جو سراسر ظلم ہے ،عدالت عالیہ کے واضع احکامات ہیں کہ سندھ کے قبرستانوں سے قبضے ختم کرائے جائے لیکن افسوس سکھر انتظامیہ بااثر بلڈر اور مافیا کے سامنے بے بس دیکھائی دیتی ہے مظاہرین نے بالا حکام سے نوٹس لیکر قبرستان میں قبضے ختم کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔